اداریہ

السلام علیکم محترم قارئین

جس طرح  ہر سفر کی کوئی منزل ہوتی ہے اور اس کا مقصد بھی متعین ہوتا ہے۔بعینہ اسی طرح  ہر بندہ مومن کی زندگی بھی بامقصد ہوتی ہے۔سب ہی کو اس مقصد اور منزل کا علم بھی ہوتا ہے۔بعض اوقات  انسانوں کی اکثریت  دنیا کی رنگینیوں میں کھو کر حقیقی مقصد سے غافل ہو جاتی ہے۔قرآن  جس کا مخاطب ہی انسان ہے،اس میں سفر زندگی کے مقاصد متعین کر دئیے گئے ہیں۔ اس سارے نظام سے اللہ کا بھی ایک مقصد ہے وہ یہ کہ اس کی پیدا کی ہوئی آزمائشوں سے اس کے بندے کس طرح عہدہ برآ ہوتے ہیں اور کون بہتر عمل کر کے دکھاتا ہے۔ اگر کہیں بندوں سے بھول ہو رہی ہو۔ان کی اخلاقیات اور فکر و عمل دین کے ساتھ مطابقت نہ رکھتے ہوں۔قول و فعل کا تضاد ہو۔تب پھر سوچنے کا مقام ہے۔اس حوالے سے  اگر ہماری محنت  رب کے ہاں مقبول ہوئی اور ہماری کسی بھی کوشش سے بندے غفلت میں پڑنے کی بجائے رب سے قریب ہوئے تو یہی  ان کی اور ہماری  بھی بڑی کامیابی ہو گی۔

یہ اداریہ ایک ریمائنڈر ، یعنی  یاداشت بھی ہے۔اسرا میگزین کے مصنفین کے لیے۔الحمدللہ تحاریر موصول ہو رہی ہیں اور زور و شور سے  رمضان شمارے کی تیاریاں جاری ہیں۔جن مصنفین کا لکھنے کا ارادہ ہے ان سے گزارش ہے کہ جلد از جلد اپنی تحریریں مکمل کر کے بھجوا دیں۔ان شاءاللہ یہ شمارہ ایساتیار کریں گے جو بندوں کو اللہ سے جوڑ دے اور وہ اس مبارک مہینے کا حق ادا کر دیں۔قرآن کی تلاوت ہو یا ذکر و اذکار،یا پھر اس مہینے اللہ کی رحمت و برکت  سمیٹنے کے مواقع،زندگی کی اس مہلت کا کوئی لمحہ ضائع نہ جائے۔یوں جب لیلہ الجائزہ ہو تو ہم سب کا  دامن اللہ کی مغفرت اور رضامندی سے لبریزہو۔خوش قسمت ہوتے ہیں ایسے لوگ جو اپنے لمحات کو قیمتی بنا لیتے ہیں۔

عظمیٰ عنبرین: نائب مدیرہ

About عظمیٰ عنبرین

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *