Home / شمارہ اپریل 2018 / بے رنگی عورت

بے رنگی عورت

تحریر: عمیرہ باری

عورت “: لفظ یوں محسوس ہوتا ہے جیسے زندگی کی رنگینی ہے .ہمارا معاشرہ بے حس ہے یا ہم ۔یہ سوچنے کی بات ہے آج کے تیز رفتار وقت میں عورتیں ہر مقام پر مردوں کے شانہ بہ شانہ کھڑی ہیں .کوئی ایسا شعبہ ہا ے زندگی نہیں جہاں عورتوں نے خود کو نہ منوایا ہو۔دنیا کی ساری چہل پہل اور گھما گہمی تنہا مردوں کے وجود سے نہیں بلکہ دنیا کو آباد رکھنے اور اس میں رنگ بھرنے میں عورت کا بڑا حصہ ہے ۔

اسلام نے عورت کو قید نہیں کیا  بلکہ انہیں ہوس پرستوں کی غلیظ نگاہوں سے بچا کر محفوظ کیا اور معاشرے میں عزت والا مقام دیا ہے اسلام کی دی ہوئی آزادی اور مغرب کی دی ہوئی آزادی میں یہ فرق ہے کہ اسلام صرف تربیت کی بنیاد پر آزادی دیتا ہے جب کہ مغرب جسم کی نمائش کی بنیاد پر آزادی دیتا ہے۔ اسلام نے عورت کو اسکی پاک حدود میں رہتے ہوئےمعاشرے کے لئے کارآمد بنایا  جبکہ مغرب نے عورت کو نمائش اور چارہ بنا کر معاشرے میں بکاؤ مال بنایا جہاں عورت کا کپڑا جتنا چھوٹا ہوتا جاتا ہے اسکی ” قیمت” میں اضافہ ہوتا رہتا ہے ۔جس معاشرے میں عورت کی مارکیٹ ویلیو با حثیت کماڈٹی ہو اس کا موازنہ اسلام سے کرنا نا انصافی ہی ہو گی۔

عورت کے حقوق کے تحفظ کا مفہوم انفرادی، معاشرتی، خاندانی اور عائلی سطح پر عورت کو ایسا تقدس اور احترام فراہم کرنا ہے جس سے معاشرے میں اس کے حقوق کے حقیقی تحفظ کا اظہار  ہو لیکن آج کل عورتوں کو ننگا کرنا اور اشتہارات میں نچوانا ہی حقوق کا اصل مفہوم سمجھا جاتا ہے۔

ایک عورت اپنا مقام خود متعین کر سکتی ہے اپنے حقوق خود محفوظ کر سکتی ہے ۔اس سب کے باوجود عورت کو کمزور ثابت کرنے والی بھی عورت ہی ہے ،عورت ہی عورت کی دشمن ہے ۔ہم غور کریں کے ہم عورت ہونے کے ناتے کیا کردار ادا کر رہی ہیں ،کیا ہم آج اس مقام پر ہیں جو ہمارے دین نے ہمیں نوازا ؟بحیثیت ایک ماں ہم ایک نسل تیار کر رہی  ہیں ۔عورتوں کے حقوق کے دن منائے جاتے ہیں ،حقوق نسواں پر کالم لکھے جاتے ہیں ،لیکن سب بےسود ……ہم ظلم دیکھ کر کمزور اور خوف زدہ ہرنی کی مانند بن جاتی ہیں ،ایک ماں ہوتے ہوئے ہم اپنی بیٹیوں کو جبر سہنے کا درس دیتی ہیں ،بیٹوں کو فخر کہتی ہیں ،بیٹیوں کو ہمیشہ لاج رکھنے کا کہا جاتا ۔آپ عورت بن کر سوچیں اپنا مقام پہچانیں آنے والی نسلو ں کو سکھائیں ایک ماں مضبوط ہوگی تو ایک مضبوط نظام اور مضبوط معاشرہ قائم ہوگا .خود کو کمزور مت سمجھیں.۔

عورت بے رنگی نہیں ہوتی قدرت نے دھنک رنگ بھرے ہیں ہمارے اندر ۔

ہم مائیں ،ہم بہنیں ،ہم بیٹیاں

قوموں کی عزت ہم سے ہے ۔

About iisramagadmin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *