حمد

وجودِ اول ، وجود ِ دائم وجودد ِ یکتا وجود ہر سو

اس میں شرح نابود ایک نکتہ ،تو بحر وسعت تو بود ہر سو

ازل سے میرا شعور ِہستی ،ہے غرق تیری تجلیوں میں

سمٹ چکی ہے حیاتِ میر ،تیری محبت کا دود ہر سو

کہاں کے مشرق کہاں کے مغرب ،کہاں کی جہتیں کہاں کی سمتیں

تو بے کراں بے کراں تجلی،تو ارتقائے نمود ہر سو

تو لا مکاں کا مکین ہے لیکن،تیرا مکان ایک قلت میرا

میں وسعتوں میں ہوں تیری شامل ،اگر میرے ہیں حدود ہر سو

ہے پر تو جلوہ تبارک ،جب آخری منزل عبادت

کہاں سے انور ؔ   نظر وہ لائیں کہ ہو نصیب ِ شہود ہر سُو

About انور اللہ انور ؔ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *