رمضان

تحریر:ڈاکٹرفہد چوہدری

 سب سے پہلے تو تمام پڑھنے والوں کو رمضان مبارک۔ اللہ کریم ہم سب پر اپنی رحمتوں کا نزول فرمائے اور اس ماہ مبارک کی سعادتوں کو زیادہ سے زیادہ سمیٹنے کی توفیق عطا فرمائے۔ اس بار صحت سیریز میں رمضان کی مناسبت سے کچھ لکھا  گیا ہے تاکہ کسی کے کام آ جائے  اور میرےلیے باعث ثواب بن جائے کہ ہم سب کو نیکی اور ثواب کے معاملات میں آگے رہنا چاہیے۔ اللہ تعالیٰ اپنی خصوصی عنایت فرمائے آپ سب پر۔ آمین

اس رمضان میں  مجھ سے جو سب سے زیادہ سوال پوچھا جا رہا ہے وہ ہے کہ ہم افطار میں ایسا کیا کریں کہ دن میں پیاس کم لگے۔ آج کل گرمی زوروں پر ہے اور یہ سوال بجا ہے۔ کچھ لوگ سحر کے وقت زیادہ سارا پانی پیتے ہیں اور پھر اگلے ایک گھنٹے واش روم کے چکر کاٹتے رہتے ہیں۔ دیکھیئے زیادہ پانی پینا اس کا حل نہیں ، وہ تو روزہ شروع ہونے سے پہلے ہی پیشاب کے رستے آپ کے جسم سے خارج ہو جائے گا۔ اس ضمن میں بھی کچھ ٹپس آپ لوگوں سے شیئر کرنا چاہوں گا ۔ ہو سکتا ہے آپ لوگوں کے لیے آسانی پیدا ہو جائے۔

۱۔ دن بھر میں نمک کا استعمال کم سے کم کردیں۔ یہ مقدار پانچ ملی گرام سے ۲۳۰۰ ملی گرام  کی تجویز کی جاتی ہے۔ آسانی کے لیے سمجھئے کہ دن بھر میں آپ جتنا بھی نمک استعمال کرتے ہیں وہ عام دنوں میں ایک چائے کے چمچ کے برابر  تجویز کیا جاتا ہے لیکن رمضان میں اسے آپ  چائے کے چمچ کا آدھا حصہ تصور کریں۔ لیکن بدقسمتی سے ہمارے ہاں اس کے برعکس ہوتا ہے۔ سموسوں میں نمک، پکوڑوں میں نمک، پلاوٗ میں نمک، لسی میں نمک، سکنجین میں نمک بلکہ کالا نمک۔ اس کے علاوہ کھانوں میں دیگر مرچ مصالحہ الگ سے۔

۲۔ سحر میں ایک ہی بار پانی پینے کی بجائے آپ ایک کام کریں۔ افطار کے بعد سے سحر کے درمیان جتنا عرصہ آپ بیدار ہیں اس میں تھوڑا تھوڑا پانی پیتے رہیں۔ آپ کے ذہن میں کم از کم ٹارگٹ ۹ گلاس پانی ہو۔ یہ ۹ گلاس آپ کیسے پورے کریں؟ اگر آپ تین گھنٹہ بھی افطار سے سحر تک بیدار ہیں تو  ہر گھنٹہ میں تین گلاس یعنی ہر بیس منٹ بعد آپ ایک گلاس پانی کا ضرور استعمال کریں۔

۳۔ پھل اور سبزیاں اس رمضان میں زیادہ استعمال کریں۔ اس کے دو فائدے ہیں ، اول آپ آپ پیاس کا شکار نہیں ہوں گے، دوم آپ رمضان مین وزن بڑھانے کی بجائے گھٹا سکیں گے۔ کچھ کا ذکر کردوں جن کو آپ اس رمضان اپنے دستر خوان کا لازمی حصہ بنائے رکھیں۔ بند گوبھی، گوبھی، پالک، کھیرے، تربوز، خربوزہ، آڑو وغیرہ۔

۴۔اب یہاں یہ ذکر بھی مناسب لگتا ہے کہ ایک چیز جو  کثرت سے ہمارے گھروں میں مستعمل ہے وہ ہے بازار کا جوس یا  اس نوعیت کے دیگر مشروبات۔ ہرگز ہرگز ایسے مشروبات آپ استعمال نہ کریں جو بازار سے خریدیں جائیں۔ گھر میں بنائیں اور وہ استعمال کریں۔ اگر آپ ایک فیصد بھی اپنی صحت کا خیال رکھتے ہیں ، اپنے خاندان کی صحت کا خیال ہے  تو کولڈ ڈرنکس کا بایئکاٹ کردیں۔ یہ میری آپ سے التجا ہے۔ اپنے گھروں میں، دفاتر میں، کولڈ ڈرنکس کا استعمال بالکل ترک  کردیں۔ ایک تو اس میں چینی جو صحت کے لیے انتہائی خطرناک ہے وہ استعمال کی جاتی ہے اور نہایت کثیر تعداد میں کی جاتی ہے دوسرا اس میں کیفین آپ کی پیاس بڑھانے کا موجب ہے۔ تیسرا ان کولڈ ڈرنکس میں بارہا کینسر کا سبب بننے والے مادے پائے گئے ہیں۔ یہ مادے اگر لمبے عرصے تک استعمال کیے جائیں تو مختلف قسم کے کینسر  اور بیماریوں کا سبب بنتے ہیں جن میں مثانہ کی کمزوری، کینسر، قبض، آنتوں کی بیماریاں ، تھائی رائڈ کی بیماریاں وغیرہ شامل ہیں۔

۵۔ تلی ہوئی اور مرچ مصالحہ والی اشیاء سے اجتناب کریں۔ یہ پیاس بڑھانے کا سبب بنتی ہیں  اور اس کے ساتھ ساتھ آپ کو معدہ  کی مختلف پریشانیوں سے دوچار کرتی ہیں لیکن ہم اپنی صحت کی بجائے زبان کا چسکا نہیں چھوڑ سکتے۔ بس اتنا کہوں گا کہ اس میں کوئی غذائیت نہیں ہے، طاقت نہیں ہے صرف وقتی طور پر زبان کا چسکا ہے۔

۶۔ دہی، انڈے  اور بادام یا اخروٹ کا استعمال ضرور کریں اس رمضان۔  اس کے علاوہ کھجور اور انجیر کا استعمال بھی اس رمضان میں آپ کے لیے مفید ثابت ہوگا۔

 اللہ تعالیٰ ہم سب پر اپنی رحمتوں کا نزول فرمائے۔ آمین

About ڈاکٹر فہد چوہدری

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *