شاعرانہ کلام

ترتیب :فیصل شہزاد

حمد باری تعالیٰ

کس نے غنچوں کو نازکی بخشی

سنگ کو کس نے پختگی بخشی

کس نے بخشی زباں کو گویائی

کس نے آنکھوں کو روشنی بخشی

کس کے بس میں تھی آتشِ نمرود

کس نے صبر و سلامتی بخشی

کس نے پرواز کا ہنر بخشا

کس نے فہمِ شناوری بخشی

ابر سے آب کس نے برسا کر

مردہ مٹّی کو زندگی بخشی

کون آب و ہوا کا مالک ہے

کس نے پودوں کو تازگی بخشی

پنکھ کس نے دیے پرندوں کو

کس نے پھولوں کو پنکھڑی بخشی

پیڑ پودے اُگائے ہیں کس نے

کس  نے  دھرتی  کو  دل کشی  بخشی

کون خالق ہے سب زبانوں کا

کس نے اردو کو چاشنی بخشی

کس نے ایمان کی نمو کے لیے

علم و حکمت کی روشنی بخشی

کس نے اشرف بنایا انساں کو

کس نے خاکی کو برتری بخشی

کس نے بخشا ہمیں قلم راغبؔ

کس نے تنویرِ آگہی بخشی

شاعر: افتخار راغبؔ

***********

تربیت

زندگی  کچھ  اور  شے  ہے  ،  علم  ہے کچھ اور شے

زندگی   سوز   جگر   ہے   ،   علم   ہے   سوز  دماغ

علم میں دولت بھی ہے ، قدرت بھی ہے ، لذت بھی ہے

ایک   مشکل   ہے   کہ   ہاتھ   آتا   نہیں   اپنا   سراغ

اہل   دانش   عام   ہیں   ،   کم   یاب   ہیں   اہل   نظر

کیا    تعجب    ہے    کہ   خالی   رہ   گیا   تیرا   ایاغ!

شیخ   مکتب   کے   طریقوں   سے   کشاد   دل   کہاں

کس  طرح  کبریت  سے  روشن  ہو  بجلی  کا  چراغ!

علامہ محمد اقبال

***********

ہوا ہے فیصلہ بستی جلائی جائے گی

پھر اس کے بعد شب غم منائی جائے گی

امیر شہر کو رونا ہے جس قیامت پر

کسی غریب کے گھر میں اٹھائی جائے گی

مجھے صفائی کا موقع بھلے ملے نہ ملے

سنا ہے عام عدالت لگائی جائے گی

بلا کے سامنے کر کے کھڑ ا کٹہرے میں

میرے خلاف کہانی بنائی جائے گی

یہ داستانِ وفا ہے یہاں نہیں طاہرؔ

بروز حشر سنی اور سنائی جائے گی

احمد بشیر طاہر

***********

About iisramagadmin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *