Home / شمارہ اگست 2018 / شاعرانہ کلام

شاعرانہ کلام

ترتیب :فیصل شہزاد

 

*حمد باری تعالیٰ*

اے رب ذوالجلال، اے ذی قوہ و المتین

میرے پروردگار

کروں تیری حمد میں  صبح و شام

جیسے کرتے ہیں پرندے لیل و نہار

تیری رحمتوں کی کوئی حد نہیں

تیری نعمتوں کے خوان

اترتے ہیں بے شمار

اے مہربان ، اے رحیم

زندہ و پائندہ ہے تو

پھیلا ہوا ہے نور تیرا

ارض و سماوات میں

میری آنکھوں کو بھی منور  کر دے

اور عطا کر روشنی  مضمحل روح کو

کھنکتی مٹی کا

اک  حقیر ذرہ تھی میں

اپنی رحمت سے ڈھانپ کر

بنا دیا مجھ کو اشرف المخلوقات

لازم ہے کروں صرف تیری ہی بندگی

کہ یہی ہے

صراط المستقیم

اے  رب الفلق

چاک کر  سیاہی میرے قلب کی

دین و دنیا کی بھلائی

مجھ کو ملے

ذکر سے تر ہو ں گر

زبان و دل مرے

ظاہر و پوشیدہ سے واقف ہے تو

کردے مجھے بھی معتبر

بخش دے  ہر اک خطا

دور کر دے

ہر اندیشۂ  ملال

 سلمیٰ جیلانی

٭٭٭٭٭٭٭٭٭

*نعت رسولِ مقبول ﷺ *

تمنا مدتوں سے ہے جمال ِمصطفیٰ دیکھوں

امام الانبیاء ﷺ دیکھوں، حبیب ِکبریا دیکھوں

وہ جن کے دم قدم سے صبح نے بھی روشنی پائی

منور کر دیا جس نے، فضا وہ رہنما دیکھوں

وہ جن کی برکتوں سے ابر و باراں بستے عالم میں

تمنا قلب مضطر کی وہ درِّ بے بہا دیکھوں

قدم باہر مدینہ سے تصور میں مدینہ ہے

الہی یا الہی عظمتوں کی انتہا دیکھوں

یہ دنیا بے ثبات و بے وفا و غم کا گہوارا

یہ ہے مطلوب دارِ بے وفائی میں وفا دیکھوں

وہ مبدأ خلق عالم کا، درود اُن پر سلام ان پر

میرے مولی یہ موقع دیں کہ ختم الانبیاء ﷺ دیکھوں

کبھی ہو حسن کی محفل، کبھی ہو شوق کا منظر

کبھی آنسو کی زنجیروں میں عاشق کی صدا دیکھوں

رَسُولٌ قَاسُم الْخيْرَاتِ فِی الدُّنْيَا وَ فِی الْعُقْبی

شفیق از نفس ما در ما، نبی مجتبیٰ دیکھوں

درِجنت پہ حاضر ہووں رسول پاک ﷺ کے ہم راہ

شفاعت کا یہ منظر یا خدایا میں رضا دیکھوں

تمنا مدتوں سے ہے جمال مصطفیٰ ﷺ دیکھوں

امام الانبیاء دیکھوں، حبیب کبریا دیکھوں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭

*محبت کے سجدے*

وہ دھوپوں میں تپتی

زمینوں پہ سجدے

سفر میں وہ گھوڑوں

کی زینوں  پہ سجدے

چٹانوں کی اونچی

جبینوں پہ سجدے

وہ صحرا بیاباں کے

سینوں پہ سجدے

علالت میں سجدے

مصیبت میں سجدے

وہ فاقوں میں حاجت میں

غربت میں سجدے

وہ جنگوں جدل میں

حراست میں سجدے

لگا تیر زخموں کی حالت

میں سجدے

وہ غاروں کی وحشت میں

پُر نور سجدے

وہ خنجر کے سائے  میں

مسرور سجدے

وہ راتوں میں خلوت سے

مامور سجدے

وہ لمبی رکعتوں سے

مسحور سجدے

وہ سجدے محافظ

مدد گار سجدے

غموں کے مقابل

عطردار سجدے

نجات اور بخشش

کے سالار سجدے

جھکا سر تو بنتے تھے

تلوار سجدے

وہ سجدوں کے شوقین

غازی کہاں ہیں ؟

زمیں پوچھتی ہے

نمازی کہاں ہیں ؟

ہمارے بجھے دل سے

بیزار سجدے

خیالوں  میں الجھے ہوے

چار سجدے

مصلے ہیں ریشم کے

بیمار سجدے

چمکتی دیواروں میں

لاچار  سجدے

ریا کار سجدے ہیں

نادار سجدے ہیں،

بے نور، بے ذوق

مردار سجدے

سروں کے ستم سے ہیں

سنگسار سجدے

دلوں کی نحوست سے

مسمار سجدے

ہیں مفرور سجدے

ہیں مغرور سجدے

ہیں کمزور ، بے جان،

معذور سجدے

گناہوں کی چکی میں

ہیں چُور سجدے

گھسیٹے غلاموں سے

مجبور سجدے

کہ سجدوں میں سر ہیں

بھٹکتے ہیں سجدے

سراسر سروں پر لٹکتے

ہیں سجدے

نگاہ خضوع میں کھٹکتے

ہیں سجدے

دعاؤں سے دامن جھٹکتے

ہیں سجدے

وہ سجدوں کے شوقین

غازی کہاں ہیں ؟

زمیں پوچھتی ہے

نمازی کہاں ہیں ؟

چلو آؤ کرتے ہیں

توبہ کے سجدے

بہت تشنگی سے

توجہ کے سجدے

مسیحا   کے   آگے

مداوا کے سجدے

ندامت  سے  سر خم

شکستہ سے سجدے

رضا والے سجدے،

وفا والے سجدے

عمل کی طرف

رہنما والے سجدے

سراپاِ ادب

التجا والے سجدے

بہت عاجزی سے

حیا والے سجدے

نگاہوں کے دربان

رودار سجدے

وہ چہرے کی زہرہ

چمک دار سجدے

سراسر بدل دیں

جو کردار سجدے

کہ بن جائیں جینے کے

اطوار سجدے

خضوع کی قبا میں

یقین والے سجدے

رفا عرش پر ہوں

زمیں والے سجدے

لحد کے مکین

ہم نشیں والے سجدے

ہو شافع محشر

جبین والے سجدے

وہ سجدوں کے شوقین

غازی کہاں ہیں ؟

زمیں پوچھتی ہے

نمازی کہاں ہیں  ؟

٭٭٭٭٭٭٭٭٭

*کی  آہ و زاری ‘ چلے گئے*

کی  آہ و زاری ‘ چلے گئے

آئے ‘ ۔۔۔ گزاری ‘ چلے گئے

موت ‘ ٹھکانہ جائے حساب

دی گرفتاری ‘ ۔۔۔۔ چلے گئے

زمانے نے مانگا ‘ ھم سے اثاثہ

پوشاک اتاری ‘ ۔۔۔۔۔۔۔ چلے گئے

جئیے یہاں ‘ ۔۔ بر مزاج دنیا

دیکھی دنیا داری ‘ چلے گئے

کندھے پہ ‘ اٹھانے والوں نے

مٹی اتاری ‘ ۔۔۔۔۔۔۔۔ چلے گئے

شہنائی کی گونج میں ‘ ھم نے

کی ‘ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عزاداری چلے گئے

جاذب نظر ‘ دور سے دنیا

اتری خماری ‘ ۔۔ چلے گئے

سارا ایثار ‘ ھمارے ھی سر

نبھائی یاری ‘ ۔۔۔۔۔ چلے گئے

کرنوں کے اجالے ‘ امید سحر

مگر ‘ ۔۔ شب گزاری چلے گئے

دنیا مریضہ ‘ اور دم آخر

کی تیمارداری ‘ چلے گئے

ادب سے پکارا ‘ عزرائیل نے

بلائی سواری ‘ ۔۔۔۔ چلے گئے

جبر زمانہ میں ‘ کہاں زندگی

بس عمر گزاری ‘ ۔۔۔ چلے گئے

آئے تھے تنویر ‘ معصوم ھم

لی سنگ بیماری چلے گئے

تنویر اقبال

٭٭٭٭٭٭٭٭٭

*اے پاکستان!تُو مجھے اپنی خامیوں کے باوجود پسند ہے*

شاعر:آفاق احمد

تیرے سبزہ زار،تیرے طیورِ خوش گلو۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے چہار موسم، مہکتے پھول ہر سو۔۔۔۔۔۔

مجھے تیری بارشیں پسند ہیں بس سیلاب نہ ہوں۔۔۔۔۔
میرے دیس کے گاؤں دیہات زیرِ آب نہ ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تیرے سیاستدان پسند ہیں جب نیتیں صاف ہوں
مجھے تیرا نظام پسند ہے جب اس میں انصاف ہو۔۔۔۔

تیرے کسانوں کی محنت پسند ہے بس استحصال نہ ہو
تیرے ادیب شاعر پسند ہیں بس قحط الرجال نہ ہو۔۔۔۔
تیرے ابھرتے سورج کی تابانی پسند ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے ڈوبتے سورج کی گل افشانی پسند ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اے پاکستان!تُو مجھے اپنی خامیوں کے باوجود پسند ہے۔۔۔۔۔

تیری صنعتیں پسند ہیں بس رواں دواں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے فرد فرد مل کر صورتِ کارواں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے صوبے پسند ہیں بس تعصب نہ ہو۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے شہر پسند ہیں بدامنی کا غضب نہ ہو۔۔۔۔

تیری روحانیت پسند ہے یوں مہکتی رہے۔۔۔۔
امن کی فاختہ پسند ہے اگر چہکتی رہے۔۔۔
تیرے امن کے دشمن خوار خوار ہوں۔۔۔۔۔
ناپاک عزائم سب ان کے تارتار ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اے پاکستان!تُو مجھےاپنی خامیوں کے باوجود پسند ہے۔۔۔۔۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭

About iisramagadmin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *