Home / خواتین اسپیشل / عورت بطور بہو بھی انسان ہے

عورت بطور بہو بھی انسان ہے

عموماً دیکھا گیا ہے کہ ہمارا معاشرہ بہو اور بیٹی میں فرق کرتا ہے لیکن اگر آپ نوٹ کریں تو آپ کو واضح محسوس ہوگا کہ دو بہوؤں کے درمیان بھی فرق کیا جاتا ہے ۔ خاص کر اس بہو کو بہت دبایا جاتا ہے جو گھریلو ملنسار، کم گو ،کام سے کام رکھنے والی اورعزت کرنے والی ہو اور اس پر ایک منہ پھٹ ،خود مختار بہو کو فوقیت دی جاتی ہے۔ اور اگر وہ اعلیٰ پروفیشنل ڈگری ہولڈر ہو تو پھر تو وہ کوئی ڈیمی گوڈ ہی بن جاتی ہے۔ یہ معاشرتی تفریق آخر کیوں ۔ عزت ہر ایک کی ہونی چاہئے لیکن قدر کی حقدار وہ بہو ہے زیادہ ہے جس میں وضع داری ہے ایتھیکس ہیں لیکن ہمارے اندر خوش اخلاقی کی قدر نہیں بلکہ بدزبانی کا خوف زیادہ ہے۔

 کچھ گھرانوں میں یہ بھی دیکھنے میں آیا ہے کہ وہ بہو جو تعلیم یافتہ ہو اور اچھی نوکری بھی کرتی ہو لیکن باادب اور فرمابردار ہو تو اس پر حکم چلاکر اس کی نوکری ختم کرواکر گھر داری کی طرف لگا دیا جاتا ہے جب کہ دوسری طرف بھی ایک تعلیم یافتہ بہو جو نوکری پیشہ بھی ہو لیکن منہ پھٹ ہو تو اس کے لئے رویہ “یس باس” والا ہوجاتا ہے کہ یہ تو وڈی سرکار ہے۔ بعض گھرانے ایسے بھی ہیں جو بہو یا بیوی کو کام کی اجازت دے تو دیتے ہیں لیکن یہ بھول جاتے ہیں کہ مردوں کے اس معاشرے میں ہماری گھر کی یہ عورت جب جاب یا کاروبار کرتی ہے تو وہ بھی انسان ہی ہوتی ہے۔۔ لیکن اس پر دہری ذمہ داری پڑجاتی ہے کہ وہ باہر کا بھی کام کرے اور گھر کا بھی۔ ایسا قطعاً مت کیا اور سمجھا جائے کہ عورت اگر دفتر میں کام کر کے آئے تو گھر آکر روزانہ لازمی اپنے گھر کے مردوں کی خدمت کرے، کھانا بنائے، کپڑے دھوئے اور باقی بھی بے شمار گھر کے کام کرے ۔ بلکہ اگر عورت اپنے دفتری کام کے بعد باقی گھریلو امور سرانجام دینے کی ذمہ دار مانی جاتی ہے تو مردوں کو بھی کوئی استثنٰی نہیں۔ بلکہ وہ بھی اپنی دفتری کام کرنے والی عورت کا مکمل ہاتھ بٹائیں۔ اور گھر کے کاموں، امور خانہ داری میں اپنے گھر والوں کا ہاتھ بٹانا میرے پیارے پاک نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنتِ مبارکہ بھی ہے۔ اگر اس عظیم ہستی کا یہ طرزِ عمل تھا تو پھر گھر کے کاموں میں ہاتھ بٹا کر شان ہماری بھی نہیں گھٹے گی ۔ جیسے مرد انسان ہیں اور تھکتے ہیں ویسے ہی معاملہ خاتونِ خانہ کا بھی سمجھا جانا چاہیے۔

 بہو بھی انسان ہے اور آپ کے گھر کا ایک مضبوط رکن ہے اس کی قدر کیجئے۔ بہو سکون میں رہے گی تو آپ کا بیٹا بھی خوش ، پرسکون ، پروڈکٹیو اور صحت مند رہے گا۔

 مہر عبدالرحمٰن طارق

About مہر عبدالرحمٰن طارق

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *