Home / شمارہ ستمبر 2017 / نظم – موسم اندر دا 

نظم – موسم اندر دا 

ا ک موسم ہے باہر دا
اک موسم ہے اندر دا
باہر تیرے وسوں باہر
اندر تیرے ہتھ وچ ہے
باہر باہر کردے کردے
اندر باہر ہو نہ جاوے
جیڑھا ہتھ خزانہ تیرے
تیرے کولوں کھو نہ جاوے
اندر وں موسم ہتھ وچ ہوے
جد تو چاہیں موسم بدلے
جد تو چاہیں بارش ہوے

از: سلمان حامدؔ

About سلمان حامد

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *