Home / اسرا بلاگ / ڈپریشن کا علاج از حافظ محمد شارق

ڈپریشن کا علاج از حافظ محمد شارق

ڈپریشن پر ایک مختصر پوسٹ کے بعد انباکس میں بہت سے احباب کے پیغامات موصول ہوئے ہیں جن میں انھوں نے اپنے مسائل شئیر کیے ہیں اور ڈپریشن کا حل پوچھا ہے۔ ان شاءاللہ اس حوالے سے تفصیلی تحریر عنقریب پیش کر رہا ہوں، فی الحال کچھ بنیادی نوعیت کی باتیں سمجھنا ضروری ہیں۔
ڈپریشن بنیادی طور پر دو نوعیت کے ہوتے ہیں۔ پہلی نوعیت عمومی ڈپریشن کی ہے جس میں نتائج کے ریٹ 5 سے کم ہوتے ہیں۔ یہ نتائج مخصوص ٹیسٹ اور ٹولز کی مدد سے لیے جاتے ہیں ، اس میں علامات کم ہوتی ہیں اور بالعموم اس ڈپریشن کو دورانیہ ایک ہفتے سے زیادہ نہیں ہوتا۔ اس پر ہم خود باسانی قابو پاسکتے ہیں جس کے لیے کچھ تجاویز آخری میں دی گئی ہیں۔ جبکہ ڈپریشن کی دوسری قسم دراصل خطرناک ہے اور بدقسمتی سے ہمارے ہاں عام بھی ہے۔ اسے Major یا Clinical Depressive disorder بھی کہتے ہیں جس میں علامات زیادہ اور نتائج کا ریٹ بھی زیادہ ہوتا ہے۔ یہی ڈپریشن انسان کو اندر سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار کردیتا ہے اور خاص طور پر فرد کو شوگر، بلڈ پریشر، کمزوری، ٹی بی اور دل کے امراض میں مبتلا کردیتا ہے۔ اس کا علاج گھر بیٹھے کرنا انتہائی مشکل ہے کیونکہ اس کے لیے مکمل ٹیسٹ (نفسیاتی) تاریخ اور فرد کو جج کرنا اور پھر اسی کے مطابق تھراپی یا ادویات تجویز کرنا لازمی ہے چنانچہ ضروری ہے کہ میجر دپڑیشن کی صورت میں ہم کسی ایسے ماپر سے ہی رجوع کریں جو کاؤنسلنگ کے تمام طریقے جانتا ہو۔ یہ عرض اس لیے کی گئی ہے کہ بہت سے احباب ان باکس میں مجھ سے میجر ڈپریشن کا حل پوچھ رہے ہیں جو فیس بُک پر گفتگو کرکے بتانا ناممکن ہے۔ تاہم آپ چاہیں تو ملاقات کرسکتے ہیں۔
بہرحال اگر آپ کو لگتا ہے کہ آپ درمیانی سطح کے ڈپریشن میں مبتلا ہوجاتے ہیں تو اس پر از خود قابو پاسکتے ہیں۔ اس کے لیے یہ تکنیک اور تجاویز ہیں۔
• ہمارے پاس دنیا بھر میں سب سے ملنے کے لیے وقت ہوتا ہے لیکن ہم کبھی اپنے آپ سے نہیں ملتے، یہی وجہ ہے کہ ہماری شخصیت اور روح میں تنازع پیدا ہوجاتا ہے۔ اس لیے سب سے پہلا کام یہ کیجیے کہ اپنے آپ سے ملیں ، روزانہ کچھ وقت اپنے لیے ضرور مختص کیجیے۔ یوٹیوب پر بہت سے relaxation music موجود ہیں جو بارش، سمندر اور مختلف قسم کی آوازوں پر مشتمل ہوتے ہیں۔ اپنےذوق کے مطابق ان میں سے اتنخاب کرلیں اور روزانہ کم از کم پندرہ منٹ مراقبہ (Meditation) لازماً کریں۔
• کسی ایسے گروپ سے وابستگی اختیار کریں جو آپ کے لیے حوصلہ افزائی اور سیلف اسٹیم بڑھانے کا سبب ہو۔ بالخصوص کسی ایسے عمل میں جو لوگوں کی خدمت کے لیے ہو۔ معلوم تحقیق بتاتی ہے کہ جو لوگ کسی نیک کاز سے جڑے ہوتے ہیں ان میں ڈپریشن پر قابو پانے کی صلاحیت بھی زیادہ ہوتی ہے اور ڈپریشن انھیں بہت زیادہ نقصان نہیں پہنچاتا۔
• الکوحل، تمباکو نوشی اور دیگر منشیات سے اجتناب کیجیے۔ تحقیق کے مطابق ایسے افراد جو ڈپریشن میں ان اشیا کو استعمال کرتے ہیں ان میں یہ مسئلہ مزید سنگینی کی صورت اختیار کرجاتا ہے جو اکثر اوقات خودکشی پر منتج ہوتا ہے۔
• مصنوعی شکر، بازاری تیل میں پکی اشیا، فاسٹ فوڈ اور بہت زیادہ نمکیات کے استعمال سے گریز کریں۔ فاسٹ فوڈ ڈپریشن کی ایک اہم وجہ بھی ہے۔
• سب سے آخر میں اور اہم تھراپی جو میری خود کی آزمودہ ہے اور میں نے کئی لوگوں کو تجویز کرکے اچھے نتائج پائے ہیں وہ ہے نماز۔ مگر اس کے لیے ضروری ہے کہ آپ کو کم از کم نماز کی تسبیحات اور سورہ فاتحہ کا لفظ بلفظ ترجمہ یاد ہو۔
فجر کا عشا کے بعد دو رکعت نفل اللہ سے مشکلات کی آسانی اور ڈپریشن سے نجات کی نیت سے شروع کیجیے۔
حمد و ثنا کے بعد سورہ فاتحہ پڑھیں تو اسے جلدی جلدی نہ پڑھیں بلکہ ایک ایک لفظ کو شعوری طور پر سوچتے ہوئے اس طرح پڑھیں کہ آپ کے ذہن میں ترجمہ چلتا رہے۔ (مثلاً الحمدللہ رب العالمین، تمام تعریفیں اللہ ہی کے لیے ہے) اس طرح مکمل سورت پڑھیں اور اس طرح پڑھیں کہ گویا آپ اپنے لاشعور سے گفتگو کر رہے ہیں۔ اس طرح نماز مکمل کرلیجیے۔ یہ عمل آپ کے لیے مائنڈ پروگرامنگ کا باعث بنے گا اور آپ کے ذہن سے تمام منفی خیالات نکل جائیں گے۔ دراصل ڈپریشن پر قابو پانے کے لیے ہمارے دماغ میں سیروٹرن نامی نیورون بننا ضروری ہے، اینٹی ڈپریزنت ادویات دراصل اسی نیورون کو بنانے کا کام کرتی ہے تاکہ ہم پُر سکون رہیں۔ جبکہ نیورولوجی میں یہ تحقیق بالکل ثابت شدہ ہے ہے خدا کو حاضر ناظر جانتے ہوئے اس کی عبادت یا ذکر سے ایک جانب یہ نیورون از خود بننے لگتے ہیں اور ڈپریشن کے خلاف کام کرتے ہیں۔ دوسری جانب ذکر و عبادت ہمارے لاشعور میں پروگرامنگ بھی کر رہی ہوتی ہے۔ اسی لیے خدا کا فرمان ہے کہ الا بذکر الله تطمئن القلوب۔
(حافظ محمد شارق)

About حافظ محمد شارق

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *